اتوار , 1 نومبر 2020
ensdur

پنک اکتوبر | لاریب مشتاق

تحریر: لاریب مشتاق

ہر سال اکتوبر کے مہینے کو بریسٹ کینسر کی آگاہی کے طور پر منایا جاتا ہے. ہر سال لاکھوں خواتین اس بیماری کا شکار ہوتی ہیں. ایک رپورٹ کے مطابق دنیا بھر میں ہر ایک لاکھ خواتین میں سے لگ بھگ 111 خواتین اس مرض کا شکار ہوتی ہیں پاکستان میں ہر آٹھویں  خاتون بریسٹ کینسر کا شکار ہے جب کہ ہرسال 40 ہزارخواتین اس مرض کے باعث موت کے منہ میں چلی جاتی ہیں. جان ہے تو جہان ہے. اردو کا مشہور مقولہ ہے—– پڑھا بھی اور سنا بھی—- مگر افسوس  اس پر عمل کوئی نہیں کرتا. بالخصوص خواتین اپنے امراض  چھپاتی  ہیں بر وقت علاج نہیں کرواتیں جس کی وجہ سے موت کے منہ میں چلی جاتی ہیں. ہمارے معاشرے میں بیماریوں کو گناہ، شرم، غیرت اور عزت  کے ساتھ جوڑ دیا جاتا ہے جو کہ سراسر غلط ہے. اب کرونا کو ہی دیکھ لیں. جو کوئی بھی کرونا میں مبتلا ہوا اس نے چھپانا  شروع کر دیا کہ جیسے  یہ کوئی گناہ، شرم یا عزت  کا معاملہ ہے. کوئی انہیں بتا دے کہ بیماری اللہ کی طرف سے آتی ہے. خواتین کی بیماریوں کو بھی ہم نے شرم، غیرت، حیا اور عزت ہیں میں تقسیم کر دیا ہے.
“Whether you’re a mother or father, or a husband or a son, or a niece or nephew or uncle, breast cancer doesn’t discriminate.” – Stephanie McMahon
بیماری اللہ کی طرف سے ہوتی ہے تو اس میں کیسی شرم، غیرت، اور عزت اور کیسا گناہ؟ مگر ہمارا معاشرہ یہ بات سمجھتا ہی نہیں ہے. خواتین بھی بیماریوں میں ماہر ہیں کہ میرے بچوں کا کیا ہوگا؟ بیماریاں چھپانے سے زندگی کم ہوتی ہے جبکہ بروقت علاج سے زندگی ملتی ہے کیوں کہ علاج اور صحت زندگی ہے
Early Detection For Your Protection.
انٹرنیشنل کینسر ریسرچ ایجنسی کے مطابق پوری دنیا میں ہر سال تقریبا تیرہ لاکھ80 ہزار خواتین میں بریسٹ کینسر کی تشخیص ہوتی ہے جن میں سے چار لاکھ 58 ہزار خواتین کی ہر سال اس مرض سے موت واقع ہوجاتی ہے. پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن کے مطابق پاکستان میں بریسٹ کینسر کے پھیلنے کی شرح اس وقت  ایشیا میں سب سے زیادہ ہے اور اس کی بڑی وجہ بروقت تشخیص نہ ہونا ہے اس کے علاوہ  شرم اور عزت کا پیمانہ بھی اس کی اہم وجہ ہے کیونکہ ہم بیماری کو پہلے شرم اور عزت کے ترازو میں تولتے ہیں. اس کے علاوہ غربت بھی ایک اہم رکاوٹ ہے جس سے بروقت علاج نہیں ہو سکتا. بریسٹ کینسر تمام عمر کی خواتین میں پایا جاتا ہے. اگر خواتین کو اپنے سینے کے اطراف میں
گلٹی محسوس ہو، یا درد محسوس ہو، یا اس گلٹی کا رنگ تبدیل ہو جائے، جسم میں درد محسوس ہو یا آپ  سینے کے
Early Detection Is A Better Choice.
سائز میں فرق محسوس کریں تو فوری ڈاکٹر سے رجوع کریں. ہر گلٹی کینسر نہیں  ہوتی مگر کینسر گلٹی سے  ہی ہوتا ہے لہذا گلٹی محسوس ہونے پر ڈاکٹر سے فوری رجوع کریں اور تمام عمر کی خواتین ماہانہ ڈاکٹر سے رجوع کریں اور معائنہ کروائیں. یاد رہے کہ کینسر کی بروقت تشخیص نہ ہو تو یہ پورے جسم میں پھیلتا ہے
ہر بیماری قابل علاج ہے مگر تاخیر کرنا جان لیوا ثابت ہو سکتا ہے.
Early Detection Saves Lives.
اکتوبر کے مہینے کو بریسٹ کینسر کی آگاہی کے طور پر اس لئے منایا جاتا ہے تاکہ خواتین محفوظ رہے ہیں کیونکہ خواتین گھر بناتی ہیں گھر سے معاشرہ بنتا ہے اور ایک صحتمند خاتون ہی صحتمند معاشرہ بنا سکتی ہے. اپنی غذا کا بھرپور خیال رکھیں کیونکہ جس طرح کی ملاوٹ سے بھرپور اشیا بازاروں میں مل رہی ہیں وہ کینسر کا باعث بنتی ہیں.  گھر کے مردوں کو بھی چاہیے کہ وہ خواتین کو اس بیماری کے حوالے سے آگاہ کریں. اگر آپ کے  گھر میں کوئی خاتون ہے جو اس بیماری کا شکار ہے تو اس کا ساتھ دیں اس کے ساتھ ناروا سلوک نہ کریں. حکومت کو چاہیے کہ خواتین کے لیے ماہانہ مختلف سرکاری ہسپتالوں میں فری معائنہ کا انعقاد کرے. اس کینسر کے ٹیسٹ اور علاج اور ادویات کی قیمتوں کو کم. کیا جائے تا کہ غریب خواتین اپنا علاج کرواسکیں.
اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو آمین.

تعارف Editor

یہ بھی چیک کریں

Slip of Toungue or Slip of mind | لاریب مشتاق

تحریر: لاریب مشتاق ہٹلر کا قول ہے کہ کسی بھی ملک کو شکست دینے کا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے