اتوار , 28 فروری 2021
ensdur

میرے فوجی جواں جراتوں کے نشاں | لاریب مشتاق

تحریر: لاریب مشتاق

کل میں یوم دفاع کے حوالے سے پاک فضائیہ کا خصوصی پروگرام دیکھ رہی تھی شہداء کی قربانیاں اور غازیوں کے بہادری کے واقعات نے قوم کا سر فخر سے بلند کر دیا
یہ بندے مٹی کے بندے
یہ جھنڈے مٹی کے جھنڈے
میرے ذہن میں ایک ہی سوال آرہا ہے کہ فوجی کیوں لڑتا ہے؟ وہ کون سی ماءیں ہوتی ہیں جو بیٹوں کی جھنڈے میں لپٹی لاش کے سامنے کھڑے ہوکر کہہ رہی ہوتی ہیں کہ
مجھے فخر ہے میرے اگر 50 بیٹھے ہوتے تو میں تب بھی انہیں فوج میں بھیجتی! وہ کون سا جذبہ ہوتا ہے جو فوجی اپنا سب کچھ بھول کر وطن کی خدمت کرتا ہے؟ زخمی ہونے کے باوجود میں دشمن کو تہس نہس کرتا ہے یہ سب کچھ وہ ہمارے کیے کرتا ہے اس ملک کیلیے کرتا ہے ان ماءوں کا ایک منٹ کے لئے سوچیں جو اپنے بیٹوں کو زندہ سلامت گھر سے دعاؤں کے سائے میں رخصت کرتی ہیں اور واپسی پر وہی بیٹے جھنڈے میں لپٹے ہوئے آتے  ہیں اس باپ کا سوچیں جس کا بیٹا  اس کا سہارا ہوتا ہے اور وہ اس کو کندھوں پر اٹھاءے اس دنیا سے رخصت کرتا ہے
سلام ہے ان ماؤں کو ان والدین کو جو  اپنے بیٹوں کو حوصلہ کے ساتھ پہلے گھروں سے اور بعد میں اس دنیا سے رخصت کرتے ہیں. نائن الیون کے بعد پاکستان چونکہ افغانستان کا پڑوسی ملک ہے اس لئے دہشت گردی کی لپیٹ میں رہا ہر روز پاکستان دھماکوں کی وجہ سے لہولہان ہوتا رہا آپریشن راہ راست، آپریشن راہ نجات، اپریشن ضرب عضب، آپریشن ردالفساد شروع کرکے کرکے ہمارے فوجی جوان اس ملک میں امن لے کر آئے. میجر راجہ عزیز بھٹی شہید سے لے کر لیفٹیننٹ ناصر خالد تک،  پائلٹ آفیسر راشد منہاس سے لیکر ونگ کمانڈر  نعمان تک  اور کموڈور عرفان سے لے کر لیفٹیننٹ حسن اختر تک سب پاکستان کے وہ جان پاس ثپوت  ہیں جنہوں نے اپنا آج ہمارے بہتر کل کے لئے قربان کر دیا.
اے وطن تو نے پکارا تو لہو کھول اٹھا

تیرے بیٹے تیرے جانباز چلے آتے ہیں

ہم ہیں جو ریشم و کمخواب سے نازک تر ہیں

ہم ہیں جو آہن و فولاد سے ٹکراتے ہیں
یہ کون لوگ ہیں جو شادی سے چند دن پہلے اپنی خوشیوں کا سوچے سمجھے بغیر اپنی جان قربان کرنے سے بھی دریغ نہیں کرتے جن کو اپنی شادی کی پروا نہیں ہوتی بلکہ پاکستان کا سوچ کر بخوشی اپنی  جان قربان کرتے ہیں؟ کون ہیں وہ لوگ جو مہندی والی رات بھی شہادت کو گلے لگاتے ہیں گھر میں والدین مہندی کی سیج سجا رہے  ہوتے ہیں کہ بیٹا اسی مہندی کی سیج پر بیٹھ کر شہید ہو جاتا ہے. کون ہے وہ لوگ چھوٹے چھوٹے بچوں کو اس ملک کی خاطر ہماری خاطر اس دنیا کے رحم و کرم پر چھوڑ کر چلے جاتے ہیں؟

ایہہ اپنے دیس دی عزت توں،
جان اپنی دیندے وار کُڑے
ایہہ پُتر ہٹاں تے نہیں وِکدے

وہ  لوگ جو  یہ کہتے ہیں کہ فوجی پلاٹ کے لئے شہید ہوتا ہے صرف ایک گھنٹے کے لیے ملکی سرحدوں پر جاءیں اور دہشت گردوں کا مقابلہ کریں پھر شہید ہونے کے بعد پلاٹ بھی لے لیں اور پیسہ بھی. وہ عظیم لوگ ہیں اور رہیں گے جو  ملکی مفاد کو اپنے مفاد پر ترجیح دیتے ہیں. آج پاکستان میں امن ہے ان کی وجہ سے کراچی کی روشنیاں بحال ہوئیں ان کی وجہ سے، بلو2کی رونقیں لوٹیں ان کی وجہ سے قبائلی علاقوں میں امن قائم ہوا ان کی وجہ سے ان مرد مجاہدین کو قوم کا سلام

قوموں کو راہ شہادت پر چل کر آزادی ملتی ہے

جب پودے خوں سے سینچتے ہیں بے جان کلی تب کھلتی ہے

کچھ بےوقوف لوگ آج بھی پاک فوج کے خلاف غلط بیانیہ دیتے ہیں جو بھارتی ایجنڈے کی تقلید کرتے ہیں اور یہ لوگ آپ کو سیاست اور صحافت کا پردہ چاک کرنے پر بآسانی ملتے ہیں جن کے پاس ان جوانوں کی دی ہوئی قربانیوں کی کوئی قدر نہیں ہوتی. ان کیلئے میں ہدایت کی ہی دعا کر سکتی ہوں.

ایہہ پُتر ہٹاں تے نئیں وِکدے،
کی لَبھنی ایں وچ بازار کُڑے
ایہہ دَین وے میرے داتا دی،
نا ایویں ٹکراں مار کُڑے
ایہہ پتر ہٹاں تے نہیں وِکدے

تعارف Editor

یہ بھی چیک کریں

کیا اسٹیبلشمنٹ نیوٹرل ہو گئی ہے؟ | ملک سراج احمد

تحریر: ملک سراج احمد فروری میں ہونے والے ضمنی انتخابات نے ملک کی سیاسی فضاء …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے