اتوار , 20 ستمبر 2020
ensdur

”سندھ از ناٹ کالونی آئی کے” #SindhIsNotColonyIK نوجوانوں کی ٹوئیٹر پر گرک چمک

پاکستان کے صوبہ سندھ کے نوجوان جمعہ کی صبح سے سماجی رابطے کی ویب سائیٹ ٹوئیٹر پر چھائے رہے، بعض سیاسی اور صحافتی حلقوں کی جانب سے کراچی کو وفاق کے حوالے کرنے کی اطلاعات پھیلانے کے بعد نوجوانوں نے ” سندھ از نالٹ کالونی آئی کے” یہ ٹرینڈ چلانے کا اعلان کیا تھا، اس وقت تک لاکھوں لوگ اس ہیش ٹیگ کو استعمال کر چکے ہیں۔

صوبائی دارالحکومت کراچی میں جہاں آسمان پر گج چمک جاری تھی تو ٹوئیٹر بر بھی ٹرینڈ پر اسی جذبات اور ردعمل کا اظہار کیا جارہا تھا، اس ٹرینڈ میں شریک زیادہ تر نوجوان ہیں جبکہ صحافی، ادیبوں اور سیاسی کارکنوں نے بھی اس میں اپنے خیالات کا اظہار کیا اور وزیر اعظم عمران خان سے مخاطب ہوئے۔
مہران میمن لکھتے ہیں کہ بٹوارے سے قبل کراچی ایک جدید خطوط پر استوار شہر تھا، جس کو پارسی اور سندھی ہندو کمیونٹی نے ترقی بخش، بٹوارے کے بعد کراچی میں غیر مقامیوں کی سیلاب آگیا، وفاق کے زیر انتظام قواعد و ضوابط کو پس پشت ڈال دیا گیا اب کراچی کا شمار ان دس شہروں میں ہوتا ہے جہاں رہنما دشوار ہے۔
صحافی وینگس منگی لکھتی ہیں کہ ایک بار پھر عمران خان اور اس کی جماعت کراچی کو سندھ سے عیلحدہ کرکے مرکز کے ساتھ جوڑنا چاہتی ہے جبکہ اردو میڈیا ان کی حمایت کر رہا ہے تاہم سندھیوں کے تحفظات اور خدشات کو مکمل نظر انداز کردیا گیا ہے۔
امر فیاض برڑو نے 7000 اے ڈی کا نقشہ شیئر کیا ہے اور وزیر اعظم عمران خان کو مشورہ ہے کہ وہ محتاط رہیں سندھ ہی پاکستان کی ماں ہے اس کے دشمن نہ بنیں ورنہ تمہارا نام بھی مٹ جائیگفا جس طرح ماضی کے کئی حکمرانوں کے نام مٹ گئے۔
سورٹھ سندو لکھتی ہیں کہ سندھ نے پاکستان کی آزادی کی قرار داد منظور کی اس امید کے ساتھ کہ اس سے ہماری سابق خودمختیار صوبائی حیثیت بحال ہوگی لیکن ہمیں بہت کم پتہ ہیں ہم نے بہت کم سیکھا بیھٹکی نظام آسانی سے ختم نہیں ہوتا۔
رکن صوبائی اسمبلی سریندر ولاسائی نے وزیراعظم عمران خان کی چکن کھاتے ہوئے تصویر شیئر کی ہے اور لکھا ہے کہ ”سندھ مرغے کی ٹانگ نہیں ہے۔

فہد شہزاد سولنگی نے 1920 اور 1930 کی کراچی کی تصاویر شیئر کی ہیں اور لکھا ہے کہ انیسویں صدی کا کراچی دیکھیں جس سے سندھی تہذیب، کلچر اور رویوں کا معلوم ہوتا ہے ، اگر کوئی یہ دعویٰ کرتا ہے کہ کراچی ہم نے بنایا تو وہ غلھ ہے ہمارے اباؤ اجداد نے یہ شہر بنایا تم نے اس کو تباہ کیا۔
انعم ٹالپور لکھتی ہیں کہ سندھ ہزاروں سال سے سندھیوں کا وطن ہے، یہ ہماری ماں ہے، نوجوان ایکٹسوسٹ سندھو نواز گھانگھرو لکھتی ہیں کہ صوبوں نے اسلام آباد بنایا ہے اسلام آباد نے صوبے نہیں بنائے ہیں،

جنتی دختر نے شاہ عبدالطیف بھٹائی کی شاعری شیئر کی ہے جس کا ترجمہ سندھ کی نامور رائیٹر اور شاعرہ نورالہدیٰ شاہ نے کیا ہے۔
اےبادشاہ وقت
یہ نہیں ریت ہماری
کہ تیرےجاہ و جلال و سيم و زر پر وار دیں
ہم اپنےمحبوب ہم وطن
کہ تیری اونچی فصیلوں میں مدفون ہو
ہماری چاہ و وفا
کہ تیرےمحل کےدیدہ زیب در و دیوارپر
نثارہوہمارےکچےگھروں کی خاک
اےبادشاہ وقت
یہ نہیں ریت ہماری
زمان لغاری وزیراعظم عمران خان کو مخاطب ہوکر کہتے ہیں کہ سندھ کالونی نہیں اگر آپ کی واقعی کراچی میں دلچسپی ہے تو ان 13 حلقوں میں ترقی کرکے دکھائیں جو آپ کی جماعت نے جیتی ہیں۔
ٹک ٹاک اسٹار اقصیٰ کینجھر لکھتی ہیں کہ کراچی فقط ایک شہر نہیں ہر کسی کا خواب ہے، میں نے پاکستان کے دوسرے شہروں کا بھی دورہ کیا ہے لیکن کراچی سب سے بہترین ہے اگر آپ کراچی میں رہتے ہیں تو کسی اور شہر میں رہنما ناممکن ہے۔
پروفیسر وحیدہ مہیسر ہم وفاق کی سندھ کو کنٹرول کرنے کے ارادوں کو مسترد کرتے ہیں عمران خان نیازی تمہارا رویہ سندھ دشمن ہے تمہاری سیاست سندھ میں دفن ہوجائیگی یہ سندھیوں کی طرف سے وارننگ ہے۔
سکندر ہلیو لکھتے ہیں صدیوں کے وادی مہران آزاد اور خومختار رہی ہے، بعد میں اس نے ایک سیاسی طریقہ کار سے پاکستان کو جنم دیا۔

رب نواز بلوچ نے لکھا سن لیں عمران خان سندھ از ناٹ کالونی عمران خان۔
درجنوں اراکین سندھ اسمبلی اور قومی اسمبلی، بعض دانشور اور انسانی حقوق کے کارکن تحریک انصاف کے نامزد یا ہمدرد رہے ہیں حالیہ سیاسی افواہ سازی اور اطلاعات پر ان کا کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا۔

تعارف Editor

یہ بھی چیک کریں

بلاول بھٹو زرداری کے بتائے گئے دھماکہ خیز اِنکشافات سچ ہیں یا جھوٹ؟

رپورٹ: امام بخش آپ بلاول بھٹو زرداری کو سخت ناپسند کرتے ہیں یا پھر دل …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے