ہفتہ , 8 اگست 2020
ensdur
اہم خبریں

ساہیوال: ہم یہاں چرچ بننے نہیں دیں گے، فائرنگ اور کلہاڑیوں کے وار کرکے تین مسیحی نوجوانوں کو شدید زخمی کردیا گیا

2 فروری 2020 کو پنجاب کے ضلع ساہیوال میں، مسیحی خاندان اور مسلمانوں کے مابین چرچ کی عمارت کی تعمیر کے تنازعہ کے دوران 2 مسیحی نوجوانوں کے سر میں گولی ماری گئی اور ایک کو کلہاڑی سے حملہ کرکے زخمی کردیا گیا۔
مسلمان حملہ آوروں نے عظیم مسیح اور سجاد مسیح دونوں کے سر میں گولی ماری تھی، اس کے علاوہ رازق مسیح کو کلہاڑی سے زخمی کردیا۔ تینوں افراد کو سول اسپتال ساہیوال میں داخل کرایا گیا تھا، جہاں عظیم کو انتہائی نگہداشت میں رکھا گیا تھا۔
عظیم کو تین ہفتوں بعد 24 فروری کو اسپتال سے ڈسچارج کیا گیا تھا۔ اس کے چھوٹے بھائی نے بتایا کہ “عظیم بات چیت کرنے سے قاصر ہے اور اسکے دائیں کندھے سے نیچے کا حصہ مفلوج ہے۔ اس کے علاوہ میرا ایک کزن جسے بھی گولی لگی تھی وہ اب صحت یاب ہورہا ہے۔ میرے چچا کو بھی کلہاڑی سے زخمی کیا گیا تھا۔
چند مسیحی نوجوان مقامی عیسائی برادری کے لئے ایک عمارت مہیا کرنا چاہتے تھے۔ “ہمارے گاؤں میں کوئی چرچ نہیں ہے۔ ہم ایک مقامی پادری کے گھر میں ہفتہ وار نماز کے لئے جمع ہوتے ہیں۔ ہم ان خواتین اور بزرگوں کی سہولت فراہم کرنا چاہتے تھے جو ہر اتوار کو قریبی شہر کا سفر نہیں کرسکیں۔

پاکستان کے دیہی علاقوں میں گرجا گھر بنانے کے دوران عیسائیوں کی اکثر مخالفت کی جاتی ہے۔ مظفرآباد میں مقامی مسلمانوں نے مقامی حکام کی اجازت کے باوجود چرچ کی تعمیر کو روکنے کے لئے عیسائیوں کی پانی کی فراہمی منقطع کردی۔

تعارف Editor

یہ بھی چیک کریں

سماجی رابطوں کی ویب سائیٹ ٹوئیٹر پر تین لاکھ سے زائد آوازیں #SindhIsNotColonyIK

کراچی ( اسٹاف رپورٹر) سماجی رابطوں کی ویب سائیٹ ٹوئیٹر پر تین لاکھ سے زائد …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے