اتوار , 20 ستمبر 2020
ensdur

تھرپارکر میں ممکنہ بارشوں کے پیش نظر وزیر اعلیٰ سندھ کے فوکل پرسن صوبائی وزیر سید سردار علی شاہ کے زیر صدارت اجلاس

وزیر اعلی سندھ سید مراد علی شاہ کی جانب سے صوبائی وزیر ثقافت سید سردار  علی شاہ کو ضلع تھرپارکر میں امکانی تیز بارشوں کی پیش نظر حفاظتی اقدامات کی نگرانی سونپے جانے کے بعد صوبائی وزیرآج مٹھی پہنچے جہاں انہوں نے ضلعی انتظامیہ تھرپارکر اور متعلقہ اداروں کے سربراہان سے دربار مٹھی میں میٹنگ کی اور انتظامات کا جائزہ لیا۔ اس موقع پر وزیر اعلیٰ سندھ کے مشیر براٗے انسانی حقوق ویرجی کولہی، ایم پی اے فقیر شیر محمد بلالانی، ایم پی اے قاسم سراج سومرو، ڈپٹی کمشنر تھرپارکر محمد نواز سوہو، چیئرمین میونسپل کمیٹی مٹھی ڈاکٹر منوج کمار ملانی، ایس ایس پی تھرپارکر حسن سردار نیازی اور دیگر متعلقہ اداروں کے افسران نے شرکت کی۔ اس موقع پر صوبائی وزیر کی جانب سے ضلعی انتظامیہ سے  مون سون کی بارشوں کے انتظات کے متعلق تفصیلات معلوم کی، جبکہ محکمہ صحت، بلدیات، لائیواسٹاک، زراعت، موسمیات روڈز، پبلک ہیلتھ انجنئرنگ اور دیگر متعلقہ اداروں کے افسران سے کئے گئے انتظامات کے متعلق معلومات حاصل کیں اور ہدایت کی کہ کوئی بھی آفیسر بغیر اجازت ہیڈ کوارٹر نہ چھوڑے اور تیز بارشوں کے حوالے سے لوگوں کو پریشانی و تکالیف سے بچانے کے لئے ہر محکمہ اپنا فعال کرادار ادا کرے، اس سلسلے میں کسی بھی قسم کی کوتاہی ہر گز برداشت نہیں کی جائے گی۔ صوبائی وزیر نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میں وزیر اعلیٰ سندھ کی خاص ہدایات پر تھر آیا ہوں، انہوں نے کہا کہ تھرپارکر میں مون سون کی بارشیں زندگی بخشتی ہیں اور تھرپارکر کا فطری حسن نمایان ہوتا ہے مگر اس کے باوجود حکومت سندھ ضلع تھرپارکر کی عوام کو مون سون کی امکانی تیز بارشوں کے پڑنے کے بعد پریشانی و تکالیف سے بچانے کے لئے بلکل متحرک ہے، یہی سبب ہے کہ وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے سندھ بھر کے اضلاع میں فوکل پرسن مقرر کئے ہیں جو کہ ضلع میں جا کر بارشوں کیب متعلق انتظامات کا جائزہ لیں گے۔ ایک سوال کے جواب میں صوبائی وزیر نے کہا کہ تھر کلیمٹی ایکٹ میں کچھ ترامیم کی ضرورت ہے جس کے لئے اقدامات کئے جائیں گے۔ ایک اور سوال کے جواب میں صوبائی وزیر نے کہا کہ 18ویں ترمیم کے بعد ثقافتی کھیلوں کے انعقاد کی ذمہ داری اب محکمہ کھیل کو سونپی گئی ہے، صوبائی وزیر نے کہا کہ تحصیل نگرپارکر میں پانی ذخیرہ کرنے والے ڈیمز کی بہتری اور مرمت کے لئے کوشش کی جائے گی۔ اس موقع پر ڈپٹی کمشنر تھرپارکر محمد نواز سوہو نے بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ تھرپارکر ضلع میں 7تحصیل،  9بیراجی دیھ اور 163دیھ ریگستان پر مشتمل ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ ڈپٹی کمشنر آفس میں کنٹروم روم قائم کیا گیا ہے اور اس کے علاوہ مختلف کمیٹیاں بھی تشکیل دی گئی ہیں، اسی طر ح مختلف تحصیلوں میں امدادی کیمپوں کے کے لئے نشاندہی کی گئی ہے اور جانوروں کی حفاظت کے لئے مختلف تحصیلوں کے لئے 89وٹنری کیمپ قائم کرنے کے لئے نشاندہی کی گئی ہے، ڈپٹی کمشنر نے کہا کہ بارشوں کے پانی کی فوری نکاسی کے لئے 53ڈی واٹرنگ پمپ مشین، 12ٹریکٹر ٹرالیاں، 8واٹر ٹینکر اور 11 فائر برگیڈ کی گاڑیان موجود ہیں۔ اس موقع ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر 1سید کبیر شاہ، ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر 1راجیش کمار، ایڈیشنل ڈپٹی ڈائریکٹر سوشل ویلفئیر ناتھوخان راہموں، ایکسین پبلک ہیلتھ جواہر لال، ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر کیول رام، ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر سیکنڈری غلام نبی ساہڑ، ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر ڈاکٹر گوردن داس، چیئرمیں ڈیپلو موہن میگھواڑ، ڈپٹی ڈائیریکٹر ایگریکلچر ایکسٹیشن وجے کمار اور دیگر متعلقہ اداروں کے افسران بھی موجود تھے۔

تعارف Editor

یہ بھی چیک کریں

بلاول بھٹو زرداری کے بتائے گئے دھماکہ خیز اِنکشافات سچ ہیں یا جھوٹ؟

رپورٹ: امام بخش آپ بلاول بھٹو زرداری کو سخت ناپسند کرتے ہیں یا پھر دل …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے