منگل , 22 ستمبر 2020
ensdur

تحریک پاکستان طالبان کے سابق ترجمان احسان اللہ احسان فرار؟

پاکستانی سوشل میڈیا پر گردش کرنے والے ایک آڈیو پیغام میں مبینہ طور پر تحریک طالبان پاکستان کے سابق ترجمان احسان اللہ احسان کی جانب سے دعویٰ کیا گیا ہے کہ وہ فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے تھے۔

تاحال آزاد ذرائع سے اس بات کی تصدیق نہیں ہو سکی کہ مذکورہ پیغام میں موجود آواز احسان اللہ احسان کی ہے یا نہیں۔

بی بی سی نے اپنی رپورٹ میں دعویٰ کیا ہے کہ انہوں نے جب اس مبینہ آڈیو پیغام میں کیے گئے دعویٰ پر پاکستان فوج کے شعبہ تعلقات عامہ سے رابطہ کیا تو فوجی ذرائع نے اس دعویٰ کی تصدیق یا تردید نہیں کی اور کہا کہ وہ ابھی اس بارے میں کچھ نہیں کہنا چاہتے۔

سوشل میڈیا پر شئیر کیے گئے احسان اللہ احسان کے مبینہ آڈیو پیغام میں انھوں نے کہا کہ ’پانچ فروری 2017 کو ایک معاہدے کے بعد انھوں نے خود کو پاکستان کے خفیہ اداروں کے حوالے کر دیا تھا‘۔

اس مبینہ آڈیو پیغام میں مزید کہا گیا ہے کہ انھوں نے تین برسوں تک اس معاہدے کی پاسداری کی لیکن سکیورٹی اداروں نے انھیں بیوی بچوں سمیت قید کر لیا تھا۔

اس پیغام میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ ’ان تین برسوں میں پاکستانی فوج نے کیے گئے وعدے پورے نہیں کیے اور معاہدے کی خلاف ورزی کی‘ جس کے بعد وہ ’اپنی رہائی کے منصوبے پر کام کرنے کے لیے مجبور ہوئے‘۔

دو منٹ طویل اس آڈیو پیغام کے مطابق احسان اللہ احسان مبینہ طور پر 11 جنوری کو بھاگنے میں کامیاب ہوئے۔

مبینہ آڈیو پیغام میں مزید کہا گیا ہے کہ وہ پاکستانی اداروں اور فوج کے بارے میں اور اپنی گرفتاری اور فرار کے بارے میں مزید تفصیلات بعد میں دیں گے۔

تعارف Editor

یہ بھی چیک کریں

سینما پاکستان کا چہرہ | حسنین جمیل

تحریر: حسنین جمیل وزراعظم عمران خان کی زہر صدارت وزارت ثقافت کا ایک اعلی سطح …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے