جمعہ , 23 اکتوبر 2020
ensdur

اقرارالحسن پر پولیس کا حملہ، وزیراعلیٰ سندھ نے حملہ آور پولیس اہلکاروں کو معطل اور گرفتار کرنے کا حکم

حیدرآباد پولیس نے نجی ٹی وی کے پروگرام سرعام کے اینکر پرسن اقرار الحسن پرحملہ کردیا ، ایس ایچ او نےاقرار الحسن کو تشدد کا نشانہ بنایا، وزیراعلیٰ سندھ نے فوری نوٹس لیتے ہوئے حملہ آور پولیس اہلکاروں کو معطل اور گرفتار کرنے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق حیدرآباد کے ہٹڑی تھانے کی حدود میں ٹیم سرعام نے جرائم پیشہ افراد کے خلاف سٹنگ آپریشن کیا تھا جس کے بعد تھانے کے ایس ایچ او فاروق راؤ نے پولیس اہلکاروں کے ہمراہ اقرا ر الحسن اور دیگر سرعام کی ٹیم کے ارکان پر تشدد کیا اور انہیں کمرے میں بند کرنے کی کوشش کی۔

اے آر وائی نیوز کی رپورٹ کے مطابق ٹیم سرعام نے متعلقہ تھانے کی جرائم پیشہ عناصر کی سرپرستی کے خلاف اسٹنگ آپریشن کیا تھا جس پر تھانے کے ایس ایچ او نے اقرار الحسن کو مارا پیٹا ، رپورٹ کے مطابق تھانہ اہلکار گٹکا اور مین پوری کی گاڑیوں کو رشوت لے کر راستہ دیتے تھے۔

اے آر وائی نے واقعے کی  فوٹیج بھی نشر کی جس میں واضح طور پر دیکھا جاسکتا ہے کہ کیسے سادہ لباس میں ملبوس پولیس اہلکار اقرار الحسن پر تھپڑوں کی بارش کررہے ہیں اور انہیں کمرے میں بند کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔

اقرار الحسن نے سوشل میڈیا پر اپنے ایک پیغام میں وزیراعلیٰ سندھ کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے فوری احکامات جاری کرکے نہ صرف مجھ پر حملہ آور پولیس اہلکار کو معطل کیا بلکہ اسے گرفتار بھی کردیا گیا ہے۔

تعارف Editor

یہ بھی چیک کریں

’’غداری‘‘ کے پرچے اور عوام کا محسوس نہ ہونے والا درد | نصرت جاوید

عملی سیاست سے عرصہ ہوا ریٹائر ہوئے چودھری انور عزیز محض ایک فرد نہیں تابدار …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے